Saturday 28 May 2022
- Advertisement -

جس کے بغیر گزارا نہیں، اس پہ کیا گزری؟

معزز  قارئین،  آج  میں  ہمارے  اپنے  سماج  کے  ایک  ایسے  کردار  کے  بارے  میں  اپنے  منتشر  خیالات  کو  مکمّل  مضمون  کی  شکل  دینے  جارہا  ہوں  جو  ایک  عرصے  سے  میرے  ذہن  میں  جمع  ہوتے  رہے  ہیں.  اگر  میں  اس  وقت  اپنے  ذہن  میں  آوارہ  بادلوں  کی  طرح  منڈلاتے  پھرتے  ان  بے  لگام  خیالات  کو  لگام  نہ  دوں  تو  ڈر  ہے  کہ  مجھے  ایک  لمحہ  بھی  سکوں  کی  نیند  میسر  نہیں  ہو  سکےگی.

  میں  اس  کردار  کی  بات  کر  رہا  ہوں  جسے  ہندی  اور  اردو  زبانوں  میں  “کسان”  اورانگریزی  میں  “فارمر”  کہتے  ہیں.  یہ  وہ  کردار  ہے  جسے  ہم  تمام  بھارت  واسیوں  نے  بلا  امتیازِ  مذہب  و  ملّت  متحدہ  و  متفقہ  طور  پر  ایک  ناکارہ،  بے  فیض  اورفضول  شے  سمجھ  کر  مسلسل  نظرانداز  کر  رکّھا  ہے.  اگر  میں  کہوں  تو  مبالغہ  نہیں  ہوگا  کہ  یہی  ایک  اکلوتا  نکتہ  ہے  جس  پر  ساری  قوم  متفق  نظر  آتی  ہے.  جبکہ  ایک  غریب  کے  گھر  کے  مٹّی  کے  فرش  سے  لے  کر  کسی  امیرزادے  کے  محل  کے  پرشکوہ  ڈائننگ  ٹیبل  پر،  فٹپاتھ  کنارے  فاسٹ  فوڈ  کی  کسی  متحرّک  ہوٹل  کی  تھالی  سے  لے  کر  فائیو  اسٹار  ہوٹلوں  کے  طعم  خانوں  کےمیزوں  پربیش  قیمتی  کراکری  میں  سجنے  والے  ہمہ  اقسام  کے  خوش  رنگ  و  خوش  ذائقہ  پکوان  خواہ،  وہ  سبزی  ترکاری  سے  بنے  ہوں  یا  پھر  مرغ  و  ماہی  اور  گوشت  و  اناج  سے  بناے  جاتے  ہوں،  اسی  ناکارہ،  بے  فیض  اور  فضول  شے  یعنی  کسان  کے  ہاتھوں  کے  محتاج  ہوتے  ہیں.

کسان  ہمارے  سماج  کا  وہ  کردار  ہے  جس  کے  بغیر  سماج  کا  تصوّرمحال  ہے.  سارا  نظام  کسان  کی  محنت  اور  اس  کی  فصلوں  کی  پیداوار  پرمنحصر  ہوتا  ہے.  کسان  کے  طفیل  بیج،  کھاد  اور  جراثیم  کش  دواؤں  کا  کاروبار  اور  فیکٹریاں  چلتی  ہیں،  کسان  کے  طفیل  گاؤں  کے  لوگوں  کو  مزدوری  ملتی  ہے،  کسان  کے  طفیل  بنکروں  کی  روٹی  Haq
روزی  چلتی  ہے.  کسان  کے  طفیل  اناج  اورسبزی  کی  منڈیوں  میں  رونق  ہوتی  ہے،  کسان  کے  طفیل  پھلوں  کی  منڈیاں  آباد  رہتی  ہیں،  کسان  کے  طفیل  شہر  کے  لوگوں  کو  کئی  طرح  سے  روزگار  میسر  آتا  ہے.  کسان  کی  محنت  سےآڑھتی  کے  کاروباری  خوب  منافع  کماتے  ہیں.  کسان  کے  طفیل  شہر  کے  کروڑوں  چلرفروش  اپنی  روزی  روٹی  کماتے  ہیں.  کسان  کے  طفیل  اناج  و  شکر  اور  کپڑے  وغیرہ  کے  مل  مالکان  کی  ملیں  چلتی  ہیں.  سبزیوں  اور  پھلوں  سے  تیّار  ہونے  والی  ڈبہ  بند  فروٹ  جوس،  فروٹ  جام  وغیرہ  جیسی  مصنوعات  کی  کمپنیاں  کروڑوں  کا  منافع  کمانے  کے  لئے  کسان  ہی  کی  مرہون  منّت  ہوتی  ہیں.  یہاں  تک  کہ  کسان  کی  پیداوار  کو  خام  یا  تبدیل  شدہ  شکل  میں  بیرون  ملک  برامد  کرکے  بیشمار(اکسپورٹ  کمپنیاں)  کروڑوں  اربوں  روپیہ  کا  نفع  کماتی  ہیں.  انتے  پر  ہی  بس  نہیں  بلکہ  برامدات  سے  ہونے  والی  آمدنی  سے  ملک  کو  کروڑوں  روپیہ  کا  زر  مبادلہ  بھی  حاصل  ہوتا  ہے.  الغرض  کسان  کی  محنت  کےطفیل  سماج  کے  لاکھوں  کروڑوں  لوگوں  کو  روزگار  ملتا  ہے  اور  ملک  و  عوام  کی  ہمہ  جہتی  ترقی  ہوتی  ہے
.

  کسان  نہ  ہو  تو  ہمیں  کھانے  کو  کھانا  نصیب  ہوگا  نہ  پہننے  کو  کپڑا،  سر  پر  ٹوپی  پگڑی  نصیب  ہو  نہ  پاؤں  میں  جوتے  چپل.  مویشیوں  کو  چارہ  نصیب  ہو  نہ  ہمارے  نونہالوں  کو  دودھ  گھی  مکّھن  وغیرہ.  نہ  نوجوانوں  کو  ان  کی  پسندیدہ  جینس  پتلونیں  نصیب  ہونگی  نہ  من  پسند  ٹی  شرٹس  ہی  پہننے  کو  ملیں.  یہاں  تک  کہ  حسیناؤں  کے  لئے  سامان،  آرایش  و  زیبایش  کا  حصول  اور  تن  نازک  کو  زینت  پخشنے  والا  ریشمی  کپڑا  بھی  کسان  کی  ہی  محنتِ  شاقہ  کا  محتاج  ہے.  ایسے  میں  تھوڑی  دیر  کے  لئے  سوچئے  کہ  اگر  کسی  دن  غصہ  ہوکر  کسان  بھی  مل  مزدوروں  کی  طرح  اپنے  مطالبات  منوانے  کے  لئے  ہڑتال  کر  بیٹھیں  تو  کیا  ہوگا؟  اس  بات  کا  تصوّر  ہی  دل  دہلا  دینے  کیلئے  کافی  ہے.

مگر  سماج  کے  ١٢٥  کروڑ  لوگوں  کی  بھوک  سے  دن  رات  جنگ  کرنے  والے  اس  جانباز  سپاہی  کو  سماج  کیا  دیتا  ہے؟  رہنے  کے  لئے  ٹوٹی  پھوٹی  جھونپڑی؟  پہننے  کے  لئے  لنگوٹی؟   کھانے  کے  لئے  روکھی  سوکھی  روٹی  کے  ٹکرے؟  اور  فصلوں  کے  نقصان  پر  پینے  کے  لئے  کیڑے  مار  دواؤں  کی  بوتلیں؟  واہ  رے  سماج  واہ!  ہمیں  تو  چاہیے  تھا  کہ  ہر  روز  یا  ہر  ہفتہ  یا  پھر  کم  از  کم  مہینے  میں  ایک  بار  ہی  سہی  کسان  کے  گھر  جا  کر  اس  کے  پاؤں  چھو  کر  اس  کا  شکر  ادا  کرتے،  اور  اگر  پاؤں  چھونے  میں  عار  محسوس  ہو  تو  کم  از  کم  اس  محسن  کے  ہاتھ  ہی  چوم  آتے!  خیر

کسان  خدا  نہیں  ہوتا  لیکن  خدا  کا  مددگار  ضرور  ہوتا  ہیں.  کروڑوں  عوام  کی  بھوک  کے  خلاف  دن  رات  جنگ  کرنے  والے  اس  جانباز  سپاہی  کی  خدمات  بھی  ملک  کی  سرحدوں  کی  نگرانی  کرنے  والے  سپاہی  کی  خدمات  سے  کسی  طرح  بھی  کمترنہیں  ہیں.  تو  پھر  جوانوں  اور  کسانوں  کو  حاصل  ہونے  والی  اجرتوں  اور  سہولتوں  میں  زمین  آسمان  کا  فرق  کیوں  ہے؟  جوان  کو  تو  اس  کی  خدمات  کے  عوض  سرآنکھوں  پر  بٹھایا  جاتا  ہے،  بہترین  تنخواہ،  مفت  طعم  و  رہایش  اور  دیگر  سہولتیں  دی  جاتی  ہیں.  جام  شہادت  نوش  کرنے  پر  مکمّل  سرکاری  اعزازات  کے  ساتھ  تدفین  اہل  خانہ  کو  سرکاری  نوکری  اور  تا  حیات  وظیفہ  وغیرہ  عطا  کیا  جاتا  ہے  تو  دوسری  طرف  موسم  اور  نا  موافق  حالات  سے  لڑتے  لڑتے  فصل  ہار  کر  جام  زہر  نوش  کر  کے  اپنی  مصیبتوں  سے  ہمیشہ  ہمیشہ  کے  لئے  نجات  پالینے  والے  اس  جانبار  سپاہی  کی  آخری  رسوما  بھی  قرض  لے  کر  ادا  کی  جاتی  ہیں؟  افسوس!

کسان  بھی  جواں  کو  ملنے  والی  ہر  طرح  کی  سہولتوں  اوراعانتون  کا  پورا  پورا  حقدار  ہے.  میں  حکومت  سے  کسان  کو  بیج  دوا  کھاد  اور  بجلی  پانی  وغیرہ  مفت  فراہم  کرنے  کا  مطالبہ  کرتا  ہوں  اور  کسان  کی  پیداوار  سے  مصنوعات  تیار  کر  کے  کروڑوں  روپیہ  منافع  کمانے  والی  کمپنیوں  سے  کسان  کو  بھی  معقول  حصّہ  ادا  کرنے  کا  مطالبہ  کرتا  ہوں.  میں  حکومت  سے  یہ  بھی  مطالبہ  کرتا  ہوں  کہ  حکومت  کو  جو  زر_مبادلہ  کسان  کی  پیداوار  برامد  کر  کے  حاصل  ہوتا  ہے،  اس  زر مبادلہ  میں  سے  بھی  کسانوں  کو  معقول  حصّہ  ادا  کیا  جاۓ

ملک  بھر  میں  سرد  خانوں  (کولڈ  اسٹورس)    کا  جال  بچھایا  جاۓ  جہاں  کسان  کو  اپنی  پیداوار  محفوظ  رکھنے  کی  مفت  سہولت  میسّر  ہو  تاکہ  قیمتوں  میں  مناسب  اچھال  آنے  پر  وہ  اسے  فروخت  کر  کے  معقول  نفع  کما  سکے.

(AP Photo/Ajit Solanki)
(AP Photo/Ajit Solanki)

Contribute to our cause

Contribute to the nation's cause

Sirf News needs to recruit journalists in large numbers to increase the volume of its reports and articles to at least 100 a day, which will make us mainstream, which is necessary to challenge the anti-India discourse by established media houses. Besides there are monthly liabilities like the subscription fees of news agencies, the cost of a dedicated server, office maintenance, marketing expenses, etc. Donation is our only source of income. Please serve the cause of the nation by donating generously.

Join Sirf News on

and/or

Khwaja Nazim
Khwaja Nazim
Activist based in Hyderabad and former member of the Aam Aadmi Party

Similar Articles

Comments

Scan to donate

Swadharma QR Code
Advertisment
Sirf News Facebook Page QR Code
Facebook page of Sirf News: Scan to like and follow

Most Popular

[prisna-google-website-translator]
%d bloggers like this: